میڈیا کنٹرول اتھارٹی بل کو قائمہ کمیٹی سے منظور نہیں ہونے دینگے،جاوید لطیف

No video URL found.

قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے اطلاعات ونشریات کے چیئرمین اور مسلم لیگ (ن) کے رہنما جاوید لطیف نے کہا ہے کہ میڈیا کنٹرول اتھارٹی بل کو قائمہ کمیٹی سے کسی صورت منظور نہیں ہونے دیں گے، میڈیا پرجب بھی پابندیاں لگیں نتائج ملک کوبھگتا پڑے۔ پابندیوں کے خلاف لڑنے اور مرنے کے لیے تیار ہیں اگر بٹن دبانے سے نیا پاکستان نہیں بن سکتا تو بٹن دبانے سے اظہار رائے پر پابندی بھی نہیں لگ

سکتی۔نیشنل پریس کلب اسلام آباد میں میٹ دی پریس کانفرنس میں اظہار خیال کرتے ہوئے میاں جاوید لطیف نے کہا کہ میڈیا کنٹرول اتھارٹی بل صرف میڈیا کی آزادی کا بل نہیں میڈیا پر جب بھی پابندیاں لگیں نتائج ملک کو بھگتا پڑے۔ انہوں نے کہاکہ جمہوریت، احتساب، انتخابات اور نتائج کنٹرول چاہو گے تو پھر ماضی کے حالات بھی ذہن میں رکھنا ہوں گے، کیا ہمیں مشرقی پاکستان سے کوئی سبق نہیں سیکھنا چاہیے، کیا غلطی کی نشاندہی کرنا غداری کے زمرے میں آتا ہے؟ ہر چیز کو کنٹرول کیا جائے گا تو نتائج کو کوئی بھی کنٹرول نہیں کر سکے گا۔ آئین قانون کے دائرے میں کام کرنے والوں کو میڈیا سے کوئی خطرہ نہیں ہونا چاہیے۔ قائمہ کمیٹی کو بل پر بریفنگ دی جانی تھی لیکن اجلاس ہوا تو بتایا گیا کہ مسودہ تو تحریر ہی نہیں کیا گیا، طاقت وروں سے اپیل کرتا ہوں کہ اگر قانون بنانا ہے تو مسودہ چھپانے سے کیا حاصل۔ قائدِ اعظم کی تصویر سامنے رکھ کر آئین شکنی کرتے ہیں، بعد میں قائد کے فرمودات سناتے ہیں ،ابھی بل پاس نہیں ہوا تو اسلام آباد میں کئی صحافیوں پرحملے ہوچکے ہیں

۔انہوں نے کہا کہ اراکین پارلیمنٹ میڈیا کے ساتھ کھڑے ہیں،میڈیا دھرنا دے گا تو ہم بھی ان کے ساتھ دھرنا دیں گے ۔انہوں نے کہا کہ فواد چوہدری نے جس ادارے پر میڈیا کنٹرول بل متعارف کرانے کا الزام لگایا ہے اس ادارے کو اس کا نوٹس لینا چاہیے،اگر ادارے نے نوٹس نہ لیا تو اطلاعات کی کمیٹی ضرور نوٹس لے گی،جواب نہ آیا تو فواد چو ہدری سے کمیٹی میں جواب لیں گے

شیئر کریں

Top