لاہور ہائیکورٹ نے سابق آئی جی مشتاق سکھیرا کی تاحکم ثانی پولیس سیکورٹی اور بلٹ پروف گاڑی واپس لینے کے نوٹیفیکیشن پر عمل درآمد معطل کر دیا

  • IMG_20210119_162310.jpg

لاہور ہائی کورٹ میں سابق آئی جی پنجاب پولیس کی پولیس سیکورٹی اور بلٹ پروف گاڑی واپس لینے کا معاملہ۔ ۔۔

عدالت نے درخواست سماعت کے لیے منظور کر لی

عدالت نے درخواست پر وفاقی اور صوبائی حکومت کو نوٹس جاری کرتے ہوئے جواب طلب کر لیا ۔

عدالت نے تاحکم ثانی درخواستگزار کی پولیس سیکورٹی اور بلٹ پروف گاڑی واپس لینے کے نوٹیفیکیشن پر عمل درآمد معطل کر دیا ۔
مجھے سنے اور دفاع کا موقع دیے بغیر پولیس سیکورٹی اور بلٹ پروف گاڑی واپس لے لی گئی ہے ۔وکیل درخواستگزار ۔

آیا کیا جانا بدنیتی پر مبینی اور غیر قانونی ہے۔وکیل درخواستگزار

پولیس چیف کے ساتھ میری کارکردگی احسن رہی ہے ۔وکیل درخواستگزار

چیف جسٹس قاسم خان نے مشتاق احمد سکھیرا کی درخواست پر سماعت کی

درخواستگزار کی طرف سے قانون دان ڈاکٹر خالد رانجھا ایڈووکیٹ پیش ہوئے

درخواست میں آئی جی پنجاب پولیس ۔ایڈشنل سیکرٹری ہوم ۔سیکرٹری سروسز پنجاب اور چیف سیکرٹری پنجاب کو فریق بنایا گیا ہے ۔

وہ سابق آئی جی پنجاب پولیس ہے۔وکیل درخواستگزار ۔

سابق پولیس چیفک ہونے کے ناطے وہ ہر قسم کے الاونسز اور مراعات کا حق دار ہے ۔وکیل درخواستگزار

وہ سانحہ ماڈل ٹاون کا مبینہ ملزم ہے اور کیس کا ٹرائل انسداد دہشت گردی عدالت میں زیر سماعت ہے ۔وکیل درخواستگزار

اسکو سابق پولیس چیف ہونے کے ناطے بلٹ پروف گاڑی اور پولیس سیکورٹی دی گئی ۔وکیل درخواستگزار ۔

سیاسی بنیادوں پر اسکو دی گئی پولیس سیکورٹی اور بلٹ پروف گاڑی واپس لے لی گئی ہے ۔وکیل درخواستگزار ۔

ایسا کیا جانا اسکی جان کے لیے سیکیورٹی رسک ہے۔وکیل درخواستگزار ۔

عدالت 13 نومبر کے بلٹ پروف گاڑی اور پولیس سیکورٹی واپس لینے کا حکم کالعدم قرار دے استدعا ۔

اسکو بلٹ پروف گاڑی اور پولیس سیکورٹی دینے کا حکم دے استدعا

Comments

comments