پاکستانی قوم کی ایسی صورتحال ہمیں قبول نہیں ہے، ہم قوم کو آزاد اور خود مختار دیکھنا چاہتے مولانا فضل الرحمان

  • F1CA1B20-D6E9-42AB-9321-89CB5D6D012B.jpeg

پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے کوئٹہ میں بڑے جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہم اداروں کا احترام کرتے ہیں لیکن پاکستانی قوم کی ایسی صورتحال ہمیں قبول نہیں ہے، ہم قوم کو آزاد اور خود مختار دیکھنا چاہتے ہیں انہوں نے کہا کہ
‎این آر او ہماری نہیں اب تمہاری ضرورت ہوگی تم نے انصاف کےنام پر لوگوں کو دھوکا دیا، کہا ایک کروڑنوکریاں دوں گا، ادارے ملک کے لئے ناگزیر ہوتے ہیں، اس قسم کی پالیسیوں کے بعد کشمیر کا بچہ آج کیا سوچ رہا ہوگا بھارت نے اس وقت خوشی منائی جب آزادکشمیر کےوزیراعظم پرغداری کامقدمہ بنا ، ہماری خارجہ پالیسی کا محور ہمیشہ کشمیر رہاہے، ‏کیا عمران خان نےخودکشمیر کو 3 حصوں میں تقسیم کرنےکا مشورہ نہیں دیا تھا، تم خارجہ پالیسی کہاں جانتےہیں، پاکستان کو تنہا کردیا، ہم کشمیریوں کو اپنے جسم کا حصہ سمجھتے ہیں، حکومتی خارجہ پالیسی ہےہی نہیں اورنہ شعورہےکہ خارجہ پالیسی کس کوکہتےہیں، ہم نے آج چین اورسعودی عرب جیسےدوست کو ناراض کیا ہے اس وقت بھی کہا تھا ملک مزید ان کے حوالے نہ کرو، معیشت تباہ ہوگی ، اس وقت بھی کہا تھا ملک مزید ان کے حوالے نہ کرو، معیشت تباہ ہوگی ، آج افغانستان بھی آپ کی بات نہیں کررہا، ان دونوں ممالک نے مشکل وقت میں ہمارا ساتھ دیا ہے، پاکستان اب معاشی لحاظ سے کنگال ہوچکاہے، اس وقت بھی کہا تھا ملک مزید ان کے حوالے نہ کرو، مزید معیشت تباہ ہوگی ، آج پاکستان کی معیشت حکومت نے تباہ و برباد کردی ہے، بلوچستان نےجس طرح آزادی مارچ میں ساتھ دیا وہ مجھ پر قرض ہے، کوئی مائی کالعل نہ سوچےکہ چھوٹےصوبوں کےحقوق پرقبضہ کی کوشش کرینگے، اگر کچھ بھی اخلاقی اقدارموجودہیں تووزیراعظم اورصدرکےاقتدارمیں رہنےکاکوئی جواز نہیں ہیں، مریم نوازصاحبہ اور کیپٹن صفدر کیساتھ ہونیوالےواقعہ کی شدید مذمت کرتاہوں ان میں تھوڑی سےغیرت ہےتوانہیں چلوبھر پانی میں ڈوب مرناچاہیے، بلوچستان کےایک مہمان کو گرفتار کرنایہ صوبے کی روایات اور مہمانداری کیخلاف ہے، کوئی مائی کالعل بلوچستان کےحقوق اورملکیت پرقبضہ کرنےکانہ سوچے، ‏یہ حکمران جعلی تھےاورجعلی ہیں، ہم 18ویں ترمیم اوراین ایف سی ایورڈمیں تبدیلی نہیں ہونےدینگے، عدالت عظمیٰ کافیصلہ واضح طور پراعلان کررہاہےکہ پاکستان پی ڈی ایم کاموقف درست ہے، ان جعلی حکمرانوں کیخلاف ہماری تحریک اوربھی تیز ہوگی عدالتی فیصلےکےبعدآپ کےپاس حکومت میں رہنےکاجوازہی نہیں ہے، جب لاہورکی مسجدمیں فلم بندی ہوئی تو آپ کوحرمت نظرنہیں آتی؟ کہتےہیں مزارقائد پرنعرے لگائےتھے،یہ توجرم ہے،اس پرتو کارروائی کی جاتی ہے، ایک مہمان کوایئر پورٹ پرروکاگیا، ہم اس کی بھی مذمت کرتےہیں، مریم اورصفدر کیساتھ پیش آئےواقعےکواخلاقی دیوالیہ پن قراردیتاہوں، جب ایسے ناپاک اقدامات ہوں گے تو یاد رکھو ردعمل بھی آئے گا ہم فرانس اور ڈنمارک کوپیغام دیتے ہیں کہ توہین آمیزخاکوں کی سنگین الفاظ کی مذمت کرتے ہیں، فرانس اور ڈنمارک نے بڑا جرم کیا ہے آپ کی مرضی ہے ظلم سےنکلنا چاہتے ہو ہمت کرو اور آگے بڑھو اگر پاکستان کو مستحکم خوشحال بنانا ہے تو خوشحالی کیلیے باہر نکلنا ہوگا، طاقتورلوگوں سےکہتاہوں ،ہماری محبت اوروفاداری کامذاق نہ اڑاوں، پوری قوم پر ایسے حالات مسلط ہوجائیں توباہر نکلنا پڑتاہے آپ کی مرضی ہے ظلم سےنکلنا چاہتے ہوں ہمت کرو اور آگے بڑھو، اب یہ سفر جاری ہے اور جاری رہے گا پاکستانی قوم کی ایسی صورتحال ہمیں قبول نہیں ہے، ہم قوم کو آزاد اور خود مختار دیکھنا چاہتے ہیں،

Comments

comments