وفاقی وزیر اطلاعات سینیٹر سید شبلی فراز کا وزیراعظم آزادکشمیر کو خط

  • 1D3F6FA7-B4D5-4B77-AE9B-6847DDE59863.jpeg

وزیراعظم آزاد حکومت ریاست جموں وکشمیر راجہ محمد فارو ق حیدر خان کی زیر صدارت موضع بڑھنگ کے بندوبست و واٹر سپلائی سکیم کے حوالے سے اعلیٰ سطحی اجلاس میں فیصلہ کیا گیا ہے کہ بڑھنگ سمیت ایسے موضعات جہاں بندوبست کے ایشو ہیں میں فوری طور پر بندوبست کا کام شروع کیا جائے گا بڑھنگ ماڈل ویلج بنایا جائے گا اس کے ساتھ ساتھ علاقے کو پینے کا پانی مرکزی واٹر سپلائی سکیم سے بھی فراہم کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے اس حوالے سے اعلیٰ سطحی اجلاس زیر صدارت وزیراعظم آزادکشمیر راجہ محمد فاروق حیدر خان منعقد ہوا اجلاس میں سینئر وزیر چوہدری طارق فاروق ،وزیر کالجز کرنل (ر)وقار نور ،سینئر ممبر بورڈ آف ریونیو ،پرنسپل سیکرٹری ،ممبر بورڈ آف ریونیو ،ڈپٹی کمشنر بھمبر نے شرکت کی ۔اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم راجہ محمد فاروق حیدر خان نے کہا کہ بڑھنگ آزاد کشمیر کا سب سے بڑا گائوں اور اس کے باسیوں نے ہمیشہ ہمارے اوپر اعتماد کیا ان کے ساتھ کیے گئے وعدے پورے کریں گے آزادکشمیر کے اندر ماڈل ویلج بنائے جائیں گے جہاں پر تمام بنیادی سہولیات فراہم کی جائیں گی عوام الناس کی جانب سے بھی اس حوالے سے بھرپور تعاون کی توقع ہے حکومت اور عوام ملکر علاقے کے اندر سماجی ،اقتصادی و پائیدار معاشی ترقی کو حاصل کر سکتے ہیں وزیراعظم نے کہا کہ بڑھنگ کے ساتہ دیرینہ تعلق ہے اس علاقے کے لوگوں نے جو پیار و محبت دی اسے فراموش نہیں کر سکتے اپنی مدد آپ کے تحت کروڑوں روپے کے منصوبہ جات مکمل کیے گئے حکومت بھی پیچھے نہیں رہے گی اور ہم نے فیصلہ کیا ہے کہ آزادکشمیر بھ رمیں ماڈل ویلج بنائے جائیں گے جس کا آغاز بڑھنگ سے کیا جائے گا
۔
وفاقی وزیر اطلاعات سینیٹر سید شبلی فراز کا وزیراعظم آزادکشمیر کو خط سید شبلی فراز نے وزیراعظم آزادکشمیر کو لکھے گئے خط میں کہا ہے کہ پی آئی ڈی اسلام آباد میں ہونے والے ناخوشگوار واقع کے بعد متعلقہ فریقین کو بلا کر معاملے کا احسن طریقے سے حل کر لیا گیا ہے کشمیر صحافیوں سمیت میڈیا صنعت سے وابسطہ تمام صحافیوں اور کارکنان کے حقوق کا تحفظ ہماری ذمہ داری ہے مستقبل کے لیے شفافیت اور میرٹ پر مبنی ایسا نظام وضع کر رہے ہیں جو ذاتی پسند اور ناپسند سے بالا تر ہو اور صحافتی برادری کو درپیش مسائل کے حل میں کارگر ثابت ہو سکے اس ضمن میں تمام فریقین سے مشاورت کے عمل کا آغاز کر رہے ہیں حکومت پاکستان وزیراعظم پاکستان عمران خان کی قیادت میں آزادی اظہار رائے کے بنیادی ،آئینی اور جمہوری حق پر کامل یقین رکھتی ہے ۔ملک میں آزاداور ذمہ دار صحافت کے فروغ کے لیے تمام ممکنہ سہولیات فراہم کرتے رہیں گے ۔یادرہے کہ اسلام آباد میں کشمیر ی صحافی اعجاز عباسی کے ساتھ پی آئی ڈی اسلام آباد میں ناخوشگوار واقعہ پیش آیا تھا جس پر وزیراعظم آزادکشمیر نے وزیر اطلاعات شبلی فراز کو خط لکھا تھا ۔
وزیراعظم آزادکشمیر و صدر مسلم لیگ ن راجہ محمد فاروق حیدر خان نے کہا ہے کہ اللہ رب العزت نے مسلم لیگ ن کی حکومت کو یہ توفیق عطاء کی کہ ختم نبوت کو آئین کا حصہ بنایا ۔تیرہویں ترمیم کے ذریعے آزادکشمیر حکومت اور اسمبلی کو اختیارات واپس دلوائے ۔نئے فنانشل ایگریمنٹ کے ذریعے آمدن میں اضافہ کیا ہمارا موازنہ کسی بھی حکومت سے کر کہ دیکھ لیں آپ کونظر آئے گا کہ اللہ رب العزت نے جو کام ہم سے لیے وہ کسی اور کے مقدر میں نہیں آئے ۔آزادکشمیر کا وجود اور تشخص جب تک قائم ہے مسئلہ کشمیر پر کوئی سودے بازی نہیں ہو سکتی ۔ واضح تبدیلی نظر آئے گی حکومت بنی تو 22ارب روپے کے مقروض تھے لیکن ہم نے مالیاتی ڈسپلن قائم کیا آمدن میں اضافہ کیا گرانٹ لینا بند کی اور ریاست اپنے پائوں پر کھڑی ہوئی ۔سردار عبدالقیوم خان اور سردار سکندر حیات خان بڑی قد آور شخصیات تھیں ان کے ساتھ کوئی موازنہ نہیں جو کام اللہ رب العزت نے ہم سے لیے وہ کسی اور کے مقدر میں نہںی آ سکے ۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے وزیراعظم سیکرٹریٹ میں جماعتی کارکنان سے بات چیت کرتے ہوئے کیا اس موقع پر سپیکر قانون ساز اسمبلی شاہ غلام قادر ،سینئر وزیر چوہدری طارق فاروق ،وزراء کرام راجہ نثار ،چوہدری رخسار ،ڈاکٹر مصطفی بشیر عباسی ،شوکت علی شاہ ،راجہ صدیق بھی موجود تھے وزیراعظم نے کہا کہ ہم سب متحد ہیں اور متحد ہو کر آئندہ انتخابات میں جائیں گے ہم میں کوئی دراڑ نہیں جماعت میں جمہوری ماحول ہے ہر ایک کو اظہار رائے کی آزادی ہے 2010میں مسلم لیگ ن کا قیام عمل میں لایا گیا آزادکشمیر کو بھرپور ترقیاتی بجٹ فراہم کرنے اور دیرینہ مسائل کے حل کے حوالے سے محمد نواز شریف قائد پاکستان مسلم لیگ ن کے شکر گزار ہیں وقت نے ثابت کیا کہ ان کی جانب سے آزادکشمیر میں مسلم لیگ ن کے قیام کا فیصلہ درست تھا جب مسلم کانفرنس نے شیخ عبداللہ کے موقف کو درست قرار دیا تھا تو پھر جواز نہیں رہتا تھا کہ ہم اس میں رہیں آزادکشمیر میں اقتدار پرست عوام کو بیوقوف بنانے کے لیے میدان میں آئے ہیں انہیں ناکامی ہو گی ہم نے 4سالوں میں اپنے منشور پر عملدرآمد کیا ہے ہماری صفوں میں کوئی کمزور عقیدے کا حامل شخص موجود نہیں ہم سب ایک ٹیم ہیں میں نے بحثیت وزیراعظم ایک ایم ایل اے جتنا فنڈ اور سکیم لی اگر چاہتا تو زیادہ لے سکتا تھا لیکن مساوات کے اصولوں کو مد نظر رکھا ۔ہر انتخابی حلقے میں کارکنان سے مشاورت کے لیے وزراء کی 6رکنی ٹیم مقرر کر رہے ہیں جو تمام حلقہ جات کا دورہ کرے گی اور رپورٹ پیش کرے گی ۔وزیر اعظم آزادکشمیر نے کہا کہ عام انتخابات کی بھرپور تیاری کے لیے جماعتی کارکنان کمر بستہ ہوجائیں تمام ضلعی صدور کو ضلعی ایڈمنسٹریٹر ز ،سٹی صدور کو سٹی ایڈمنسٹریٹراور یوتھ ونگ کے صدور کو لبریشن سیل میں ایڈجسٹ کیا گیا ایم ایس ایف کے بہی 10نوجوانوں کو ایڈجسٹ کیا جا رہا ہے انہوں نے کہا کہ زکواة کونسل میں بھی جماعتی ذمہ داران ایڈجسٹ ہوئے ۔وزیر اعظم نے کہا کہ تمام کارکنان تیاریاں کریںپرنٹ سوشل میڈیا میں جماعت اور حکومت کی کارکردگی کو بھرپور طریقے سے اجاگر کریں فصلی بٹیروں کی کوئی اہمیت نہیں مقبوضہ کشمیر اس وقت نازک دور سے گزر رہا ہے جب تک آزادکشمیر کا وجود اور تشخص قائم ہے مسئلہ کشمیر پر کوئی سودے بازی نہیں ہو سکتی لائن آف کنٹرول پر بسنے والے عوام کو بنیادی سہولیات کی فراہمی کے لیے 3ارب 60کروڑ روپے کے منصوبہ جات پر عملدرآمد کا آغاز کیا جا رہا ہے آزادکشمیر کے ہر گائوں میں وزیر اعظم کمیونٹی انفراسٹریکچر پروگرام کے تحت منصوبہ جات مکمل کیے گئے ہیں ۔ وزیراعظم آزادکشمیر نے کہا کہ میرے وزراء اور جماعت کے خلاف پراپیگنڈہ کرنے والوں کو ناکامی ہو گی ہم نے اللہ رب العزت کو جواب دینا ہے چار سالوں میں آزادکشمیر کے محروم پسماندہ طبقات کو میرٹ کی بالادستی ،قانون کی حکمرانی اور مساویانہ تعمیر و ترقی کے ذریعے اقتدار میں شامل کیا گولڈ میڈلسٹ تمام تعلیمی کیئریر میں فرسٹ ڈویژنز کے حامل کئی دہائیوں سے منتظر ہونہار لوگوں کو پبلک سروس کمیشن اور این ٹی ایس کے ذریعے ریاستی ڈھانچے کا حصہ بنایا جو آگے چل کر ایک روشن اور خوشحال آزادکشمیر کو عملی شکل دیں گے آزادکشمیر کے اندر بھبر سے لے کر تائوبٹ تک تمام مرکزی شاہرات کی تعمیر اور ری کنڈیشنگ کے ساتھ ساتھ تمام ضلعی ہسپتالوں میں فری ایمرجنسی سروسز کے علاوہ دل اور بچوں کے ہسپتال بنائے ۔

Comments

comments