قرنطینہ مرکز بنانے کی آڑ میں راولپنڈی انتظامیہ نے جنرل حمید گل کی بیٹی اور داماد کو واران ڈپو سے نکال کر اس پر قبضہ کر لیا

No video URL found.

محکمہ ٹرانسپورٹ پنجاب نے ضلعی انتظامیہ اور پولیس کی مدد سے راولپنڈی صدر میں واقع واران ڈپوپر قبضہ کرلیا، واران ڈپو میں داخلے کے لیے پولیس کے شیر جوانوں نے ملازمین کودھکے مارے ،ڈپوکے دفاتر میں گھس کر سارا سامان اٹھا کر پہلے باہر پھینکااورپھر گاڑی میں ڈال کو نامعلوم مقام پر منتقل کردیا، پولیس اور ضلعی انتظامیہ کی قیادت میں ہونے والے اس آپریشن کی اطلاع پا کر موقع پرخاوند کے ہمراہ پہنچنے والی چیئرپرسن عظمی گل کو پولیس نے پہلے کمرے میں بند کردیااورپھر انھیں زبردستی گھسیٹتے ہوئے باہر نکال دیا۔ہفتے کے دوپہر پولیس کے بھاری نفری ضلعی انتظامیہ کے ہمراہ اچانک صدرراولپنڈی میں واقع واران ڈپومیں داخل ہوگئی ، ملازمین نے گیٹ پر روکنے کی کوشش کی تو انھیں دھکے مار کر پیچھے دھکیل دیاگیا، واران ڈپومیں داخل ہونے واالے پولیس اہلکار دفاترکے تالے توڑتے ہوئے اندر گھسے اور سارا سامان اٹھا کر باہر پھینک دیااس دوران اطلاع پا کر چیئرپرسن واران ٹورعظمی گل اپنے خاوند کرنل (ر)یوسف گل کے ہمراہ جب پہنچی تو انھیں ضلعی انتظامیہ کی قیادت کرنے والے آفیسر کے حکم پر کمرے میں بند کردیاگیا، بعدازاں دونوں میاں بیوی کو پولیس نے گھیسٹ کر باہر نکال دیا، عظمی گل کا کہناتھاکہ واران ٹرانسپورٹ کمپنی کا کیس عدالت میں ہے جس میں عدالت نے حکم امتناہی بھی جاری کر رکھاہے ، ہمارے ڈپوپر پولیس کی قیاد ت میں محکمہ ٹرانسپورٹ پنجاب نے قبضہ کیاہے ، ہمارے بورڈ اتارکر توڑ دئیے گئے ، ہمارا سامان توڑ دیاگیااور پھراس کو نامعلوم مقام پر منتقل کردیاگیا، موقع پر موجود اے ڈی سی آر کو عدالتی حکم امتناہی بارے بتایاتو انکا کہناتھاکہ میں ہی قانون اورعدالت ہوں کسی دوسری عدالت کے حکم نہیں مانتا، جو حکم ملاہے اس پر عمل کرونگا، عظمی گل نے چیف جسٹس آف پاکستان سے اپیل کرتے ہوئے کہاہے کہ اس معاملے کا سخت نوٹس لیں اور انصاف دلوائیں ۔

Comments

comments