دولت مشترکہ پارلیمانی ایسوسی ایشن کے انتخابی میدان میں پاکستان کی شاندار فتح پارلیمانی سیکریڑی شاندانہ گلزار کا چئیرمین سی پی اے کے عہدے پر 3 سال کے لئے انتخاب

  • IMG_20190926_194239.jpg

دولت مشترکہ پارلیمانی ایسوسی ایشن کے انتخابی میدان میں پاکستان کی شاندار فتح
پارلیمانی سیکریڑی شاندانہ گلزار کا چئیرمین سی پی اے کے عہدے پر تین سال کے لئے انتخاب

کمپالا(یوگنڈا

پاکستان نے سفارتی محاذ پر ایک بڑی کامیابی حاصل کرتے ہوئے دولت مشترکہ پارلیمانی ایسوسی ایشن ( سی پی اے) میں فتح حاصل کرلی، پارلیمانی سیکریٹری کامرس اینڈانڈسٹری شاندانہ گلزار آئندہ تین سال کے لئے ایسوسی ایشن کی چئیرپرسن منتخب ہوگئیں۔ دولت مشترکہ کی خواتین ارکان کا انتخاب یوگنڈا میں دولت مشترکہ کی چونسٹھ ویں پارلیمانی کانفرنس کے موقع پر عمل میں آیا۔ پاکستان کی جانب سے پاکستان تحریک انصاف سے تعلق رکھنے والی رکن قومی اسمبلی محترمہ شاندانہ گلزار کو امیدوار نامزد کیاگیا تھا۔ انتخاب میں دولت مشترکہ کے 54 ممالک کی قومی اور صوبائی اسمبلیوں کے 180 ارکان پارلیمان نے پاکستان کی حمایت کی۔ جنوبی ایشیاءمیں کشیدگی کے شدید ماحول میں پاکستان کی اس انتخاب میں شاندار فتح دولت مشترکہ ممالک کے پاکستان کی بھرپور حمایت اور اس پر اعتماد کا اظہار ہے۔

انتخاب میں پاکستانی امیدوار شاندانہ گلزار نے 48 ووٹ حاصل کئے جبکہ ان کے مدمقابل ’کے۔مین آئیس لینڈ‘ کی وزیر تارا ریورز کو 34 ووٹ ملے۔ قبل ازیں آسڑیلیا سے امیدوار میشیل اوبیرنے انتخابی دوڑ سے دستبردار ہوگئیں جس سے دونوں خواتین میں براہ راست انتخابی مقابلہ ہوا۔

اس انتخاب میں پاکستان کی فتح کے لئے قومی اسمبلی کے سپیکر اسد قیصر نے بھی بھرپور کردار کیا۔ انہوںنے پاکستان اور اس کی پارلیمان کا تشخص اجاگر کیا اور پارلیمانی سفارت کاری کی اقدار کے حوالے سے پاکستان کا حقیقی چہرہ دنیا کے سامنے لائے۔ پاکستان کی جانب سے پارلیمانی ٹیم کی قیادت وفاقی وزیر بین الصوبائی رابطہ اور سی پی اے کی رکن ڈاکٹر فہمیدہ مرزا نے کی۔ مسلسل آٹھ ماہ کی شبانہ روز محنت کے نتیجے میں یہ کامیابی پاکستان کو حاصل ہوئی۔

آٹھ رکنی پارلیمانی وفد شاندانہ گلزار کے علاوہ ڈاکٹر عائشہ غوث پاشا، شاہین سیف اللہ، مسز عظمی ریاض جدون، بشیر محمدو ورک، سینیٹرکیشو بائی اور سینیٹر ثناءجمالی پر مشتمل تھا جس نے افریقی اور جنوب ایشیائی سمیت دیگر خطوں سے بھرپور حمایت کے لئے بھرپور مہم چلائی۔ ڈاکٹر آسیہ اسد اور مسز سبرینہ جاوید اور خیبرپختونخوا اور پنجاب اسمبلی کے ارکان پارلیمانی ٹیم کا حصہ تھے۔

انتخاب کے بعد چئیرپرسن شاندانہ گلزار نے پاکستان کی حمایت کرنے والے ممالک کا شکریہ ادا کرتے ہوئے خواتین کو بااختیار بنانے کی جدوجہد میں ایک نئے باب کے اضافے پر زور دیا۔ انہوں نے کہاکہ خواتین کو معاشی طورپر بااختیار بنانا وقت کی اہم ضرورت ہے۔ انہوںنے بھارت کے زیر قبضہ جموں وکشمیر میں انسانی حقوق کی سنگین پامالیوں کا حوالہ دیتے ہوئے کہاکہ میں ایک ایسے خطے سے آئی ہوں جہاں اس وقت انسانی حقوق کی صورتحال انتہائی مخدوش ہے اور ایک افسوسناک انسانی المیہ جنم لے رہا ہے۔ شاندانہ گلزار نے کہاکہ جمہوری اقدار کے پرزور حامی ہونے کی حیثیت سے آئیں ہم مل کر محروم اور پسماندہ عوام کی بہتری کے لئے کام کریں۔ انہوں نے امید ظاہر کی کہ دولت مشترکہ پارلیمانی ایسوسی ایشن (سی پی اے) تنازعات رونما ہونے کی بنیادی وجوہات کے خاتمے کے لئے اپنا بامقصد کردار ادا کرے گی۔

یاد رہے کہ شاندانہ گلزار قانون کے شعبہ سے تعلق رکھتی ہیں اور عالمی تجارت، معاشی قوانین کے موضوعات پر گہرا عبور رکھتی ہیں۔ وہ اگست 2018 میں قومی اسمبلی کی رکن منتخب ہوئی تھیں۔ وہ قیدی خواتین کی معاشی بحالی، قانون سازی، خواتین وکلاءکی وتربیت کے لئے بھی خدمات انجام دیتی رہی ہیں۔ انہوں نے تحقیق اور تجزیہ پر مشتمل کئی مضامین تحریر کئے ہیں جوشائع ہوچکے ہیں۔ پاکستان کے پہلے آئی پی سٹرٹیجک فریم ورک، صنعتی پالیسی اور ای کامرس کی تیاری میں انہوں نے کلیدی کردار ادا کیا۔
٭٭٭٭٭

Comments

comments