عرفانِ صدیقی کو ضمانت دینے سےانکار 14 روزہ جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھیج دیا گیا

  • IMG-20190727-WA0171.jpg
  • IMG-20190727-WA0166.jpg
  • IMG-20190727-WA0165.jpg

نواز شریف کی وزارتِ عظمیٰ میں ان کے معاون خصوصی عرفان صدیقی کو جیل بھیج دیا گیا ان کی ضمانت نہ ہوسکی اس سے حکومت کی انتمی سوچ کا اندازہ ہوتا ہے
مجسٹریٹ نے محفوظ فیصلہ سنا دیا

*عرفان صدیقی کو جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھیجنے کا حکم*

14 روزہ جوڈیشل ریمانڈ پر اڈیالہ جیل بھیج دیا گیا


سوشل میڈیا پر اس گرفتاری پر بحث ہورہی ہے ایک صارف کا کہنا ہے کہ
یار عرفان صدیقی کو اگر گرفتار کرنا ہی تھا اور اس کو نواز شریف کی کاسہ لیسی کی سزا دینی ہی تھی تو الزام تو کوئی ڈھنگ کا لگاتے ۔ پی ٹی آئی کی انتقامی ٹیم کا سب سے بڑا مسئلہ اس میں تخلیقی صلاحیتوں کا مکمل فقدان ہے ۔ یہ ٹیم کسی جاگیردار کے اپنے مزارعوں اور مخالفین کے مزاج ٹھکانے لگانے کے لئے بنائے گئے جتھے سے زیادہ اہلیت نہیں رکھتی ۔
خدا کا نام لو ۔ بندہ پھڑ لیا ہے اور الزام کونسا لگانا ہے ابھی تک واضح نہیں ۔ شرم آنی چاہیئے ۔
اور اگر کوئی عرفان صدیقی کو گرفتار کرنے کی حمایت کرے تو اسے یاد رکھنا چاہیئے کہ یہ وقت ، منصور آفاقوں ،صابر شاکروں اور عارف بھٹیوں پر بھی آئے گا ۔ عرفان صدیقی ہو یا صالح ظافر ، یا صابر شاکر ، یہ درباری مسخرے ہیں ۔ ان کو پچھلے حکمرانوں کی خوشامد کی سزا دینا نئے حکمرانوں کو زیب نہیں دیتا ۔ ان کا کام بھاگ لگے رہن کی صدا لگا کر پیٹ بھرنا ہے ۔ یہ ان کا جرم نہیں پیشہ ہے

عرفان صدیقی بھی فواد الحسن فواد سے کم نہیں تھا ۔گردن میں سریا تھا ۔بیوروکریسی میں پرچی چلتی تھی ۔ مجھے خود ایک ڈی سی نے بتایا کہ عرفان صدیقی نے تنگ کر رکھا ہے ۔کام نہ ہونے کی صورت میں کال آ جاتی کہ پرائم منسٹر ہاوس سے عرفان صدیقی بول رھا ہوں لگتا ہے نوکری کرنے کا موڈ نہیں آپکا ۔۔۔۔ ایسی دھمکیاں دیتا تھا ۔۔۔
لیکن ان سب باتوں کے باوجود عرفان صدیقی کو رات گئے کرایہ داری ایکٹ کے تحت گرفتار کرنا انتہائی بیہودہ حرکت ہے ۔اور اسکی مزمت کرتا ہوں
قلم والے ہاتھ میں ہتھکڑی۔۔۔ایک استاد۔۔۔ایک صحافی ۔۔ایک ادیب کے ساتھ یہ سلوک

img-20190727-wa0171

img-20190727-wa0166

img-20190727-wa0165

ایک صارف کا کہنا ہےکہانتہائی شرم کا مقام ہے کہ 40 سال تک تعلیم دینے والے شخص کو 144 کی خلاف ورزی پر ہتھکڑیاں لگا کر پیش کیا گیا ، انتہائی گھٹیا

Comments

comments