پاکستان کے اندرونی معاملات میں مداخلت پر سیاسی قیادت کا افغان صدر کو کرارا جواب

  • 196748_8099627_updates.jpg

Ashraf Ghani

اسلام آباد: وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی، وفاقی وزیر برائے انسانی حقوق شیریں مزاری، پاکستان پیپلز پارٹی کی رہنماؤں شیری رحمان، حنا ربانی کھر  سمیت متعدد رہنماؤں نے افغان صدر اشرف غنی کی جانب سے پاکستان کے اندرونی معاملات پر تبصرے پر شدید تحفظات کا اظہار کیا۔

گزشتہ دنوں افغان صدر اشرف غنی نے اپنی ٹوئٹس میں پاکستان کے صوبے خیبر پختونخوا اور بلوچستان میں سول سوسائٹی کے کارکنوں کی گرفتاری پر بات کی تھی۔

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے افغان صدر کی ٹوئٹ کو سختی سے مسترد کرتے ہوئے کہا ایسے غیر ذمہ دارانہ بیانات ہمارے معاملات میں مداخلت کے مترادف ہیں، افغان قیادت کو چاہیے کہ افغان عوام کے دیرینہ مسائل اور مصائب پر توجہ دے۔

وفاقی وزیر برائے انسانی حقوق شیریں مزاری کا کہنا تھا کہ افغان صدر کیلئے بہتر ہو گا کہ وہ اپنے عوام کے مسائل حل کرنے پر توجہ دیں اور افغانستان سے پاکستان میں مداخلت کاروں کی آمد کو روکیں۔

پیپلز پارٹی کی رہنما شیری رحمان نے کہا کہ جمہوری قوتیں پاکستان میں جمہوریت کی بالادستی کیلئے سرگرم عمل ہیں لیکن بغیر دخل اندازی کے مثبت انداز میں باہمی تعاون جاری رکھا جائے تو دونوں ممالک کیلئے بہتر ہو گا۔

سابق وزیر خارجہ حنا ربانی کھر کا کہنا تھا کہ افسوس کی بات ہے کہ افغان صدر نے ایک ایسے معاملے پر تبصرہ کرنا ضروری سمجھا جو واضح طور پر پاکستان کا اندرونی معاملہ ہے۔

انہوں نے کہا کہ بلوچ، پشتون، سرائیکی، پنجابی اور سندھی سب پاکستانی ہیں، ہمیں بہت سے مسائل حل کرنا ہیں مگر ایسے بیانات صورت حال کو بہتر نہیں بلکہ مزید خراب کریں گے۔

سینئر صحافی حامد میر کے مطابق پاکستان کے پاس شواہد موجود ہیں کہ افغان حکومت داعش کو خفیہ معاونت فراہم کر رہی ہے، پاکستانیوں کو افغانستان کی جانب سے داعش کی خفیہ حمایت پر شدید تحفظات ہیں لیکن آپ نے ماسکو مذاکرات کی مذمت اسلئے کی کیونکہ تمام شرکاء داعش کے مخالفین ہیں۔

سینئر صحافی مبشر زیدی نے افغان صدر کو کرارا جواب دیتے ہوئے کہا کہ پاکستانیوں کو تقسیم کرنے کی آپ کی کوشش ناکام ہو جائے گی۔

سیاسی تجزیہ کار مشرف زیدی نے کہا کہ معلوم ہوتا ہے اشرف غنی کو ماسکو مذاکرات میں دعوت نہ ملنے کا غم ہے، افغان صدر نے فیس بُک پر توجہ حاصل کرنے کیلئے ڈراما رچایا۔

یاد رہے کہ گزشتہ دنوں افغان صدر اشرف غنی نے پاکستان کے صوبے خیبرپختونخوا اور بلوچستان میں سول سوسائٹی کے کارکنوں کے حوالے سے ٹوئٹس کرکے پاکستانی قوم کو تقسیم کرنے کی سازش کی تھی جو کہ سیاسی قیادت نے ناکام بنا دی ہے۔

Comments

comments