سپریم کورٹ نے علیمہ خان کی جائیداد سے متعلق رپورٹ طلب کرلی

  • 193600_6102895_updates.jpg

بیرون ملک پاکستانیوں کی جائیدادوں سے متعلق کیس میں سپریم کورٹ نے خصوصی کمیٹی کی کارکردگی پر عدم اطمینان کا اظہارکیا ہے۔ چیئرمین ایف بی آر اور ممبر انکم ٹیکس کو توہین عدالت کے نوٹسز جاری کردئیے،علیمہ خان کی جائیداد سے متعلق رپورٹ طلب کرلی گئی ہے، چیف جسٹس نے ریمارکس دئیے کہ ایف بی آر نے ایف آئی اے کی محنت بھی سرد خانے میں ڈال دی ۔

بیرون ملک پاکستانیوں کے جائیدادوں سے متعلق کیس میں چیف جسٹس ثاقب نثار نے ایف بی آر اور ایف آئی اے پر مشتمل خصوصی کمیٹی کی کارکردگی پر عدم اطمینان کا اظہار کردیا۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دئیے کہ ایف بی آر جان بوجھ کر معاملے کو لٹکانا اور ابہام پیدا کرنا چاہتا ہے،ایف بی آر کو عزت نہیں کرانی تو ہم نہیں کریں گے، انھوں نے استفسار کیا کہ کیا ایف بی آر باہر پیسہ لیجانے والوں کو بچانا چاہتا ہے؟

چیف جسٹس نے مزید استفسار کیا کہ 20 لوگوں کی جائیدادوں کا جائزہ لینے کا حکم دیا تھا،کیا کارروائی ہوئی؟ خصوصی کمیٹی کی رپورٹ کدھر ہے؟علیمہ خان علیمہ خان کے خلاف کیا کارروائی ہوئی؟

اس پرممبر ایف بی آر نے کہا کہ 20 میں سے 14 افراد کے خلاف مزید کارروائی تجویز کی ہے،اثاثوں کی تصدیق کرنا فیلڈ افسر کا کام ہے،علیمہ خان کے خلاف لاہور آفس کو کارروائی کا کہہ دیا۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دئیے کہ مزید تحقیقات کیوں تجویز کیں؟لگتا ہےکہ ایف بی آر کو عدالت کا حکم سمجھ میں ہی نہیں آیا۔ایف بی آر نے ایف آئی اے کی محنت بھی سرد خانے میں ڈال دی۔عدالت کی ایک ماہ کی محنت پر پانی بھی پھیر دیا گیا۔

عدالت نے چیئرمین ایف بی آر اور ممبر انکم ٹیکس کی کارکردگی پر اظہار برہمی کیااورعدالتی حکم عدولی پر دونوں افسران کو شوکاز نوٹسز جاری کرکے تین دن میں جواب طلب کرلیا۔

عدالت نے ممبر حبیب اللہ کے تبادلہ پر چیئرمین اور ممبر ایف بی آر کو جاری خلاف شوکاز نوٹس واپس لے لیا۔علیمہ خان کے خلاف کارروائی پر پیشرفت رپورٹ 13 دسمبر تک طلب کرلی۔

Comments

comments